چارسدہ ایک ریلے کی تباہی سے سنبھلا نہیں کہ دوسرا درپہ آگیا

چار سدہ میں دریا کنارے آبادیاں اب بھی پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں—فوٹو: رائٹرز

چار سدہ میں دریا کنارے آبادیاں اب بھی پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں—فوٹو: رائٹرز

پاکستان کے صوبےخیبرپختونخوا کا علاقہ چارسدہ ایک ریلے کی تباہی سے سنبھلا نہیں کہ دوسرا درپہ آنے کو تیار ہے۔

انتظامیہ نے گزشتہ روز سیلاب کے بعد علاقے سے جان بچاکر نکلنے والوں کو واپس نہ جانے کی ہدایت کی ہے۔

چار سدہ میں دریا کنارے آبادیاں اب بھی پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں، ایک لاکھ 80 ہزار افراد بے گھر ہیں جب کہ نئے ریلے سے مزید نقصانات کا اندیشہ ہے۔

 ڈی سی چارسدہ کا کہنا ہے کہ دریائے سوات میں خیالی کےمقام پردوبارہ بڑاسیلابی ریلاگزرےگا، ریلاپہلےآنے والےسیلابی ریلوں سےکم ہےتاہم دوبارہ بڑھ سکتاہے۔

دوسری جانب پاک فوج نے خوازہ خیلہ سے کانجو کینٹ سوات تک پھنسے 110افرادکو ریسکیو کرلیا۔

ادھر نوشہرہ میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں پانی کی سطح مزید بلند ہوگئی جب کہ علاقے میں امدادی کارروائیاں سست روی کا شکار ہیں۔

خیال رہے کہ ملک بھر میں بارش اور سیلاب سے گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 119 افراد جاں بحق اور 71 زخمی ہوئے اور  83 ہزار مویشی بھی جان سے گئے۔