[ADINSERTER AMP] [ADINSERTER AMP]

سندھ میں بارش اور سیلاب کی تباہی سے بے گھر لوگ بیماریوں کا شکار ہونے لگے

سندھ میں بارش اور سیلاب کی تباہی سے بے گھر لوگ بیماریوں کا شکار ہونے لگے

سندھ میں بارش اور سیلاب کی تباہی سے بے گھر ہونے والے لوگ کھلے آسمان تلے بیٹھنے پر مجبور ہوگئے ہیں جس کی وجہ سے متاثرین مختلف بیماریوں کا شکار ہونے لگے ہیں۔

سندھ میں سیلاب سے ملیریا،ہیضے،ڈائیریا اور دیگر امراض پھوٹ پڑے، بچے، بوڑھے اور خواتین ان بیماریوں سے متاثر ہو رہے ہیں۔

متاثرین اور بیماروں کی تعداد بہت زیادہ بڑھتی جا رہی ہے جبکہ طبی سہولیات نہ ہونے کے برابر ہیں، ایسے میں سماجی اور فلاحی تنظیمیں بھی سیلاب متاثرین کی ہر ممکن مدد کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

سیلاب متاثرین نے مطالبہ کیا ہے کہ پاکستان کا اکیلے اتنی بڑی تعداد میں متاثرین کو ریلیف اور طبی سہولیات فراہم کرنا ممکن نہیں اس لیے عالمی برادری آگے بڑھے اور متاثرین کو ہر ممکن ریلیف فراہم کرے۔

واضح رہے کہ محکمہ صحت سندھ کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں اب تک 25 لاکھ 75 ہزار سے زائد افراد بیماریوں میں مبتلا ہوچکے ہیں۔

محکمہ صحت کے مطابق 20 ہزار کے قریب افراد جلدی امراض میں مبتلا ہوئے، ڈائریا کے 17 ہزار 919 سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے، ملیریا کے 2 ہزار 622 اور ڈینگی کے 64 مریضوں کی تصدیق ہوئی۔