گم شدہ شخص نے جزیرے پر 5 دن تک خود کو کیسے زندہ رکھا؟

فوٹو: نیلسن نیڈی

فوٹو: نیلسن نیڈی

آپ نے کئی فلموں میں تو دیکھا ہوگا کہ ہیرو کسی جزیرے یا پہاڑوں میں گم ہونے کے باوجود مشکل حالات کا سامنا کرتے ہوئے اپنی جان بچالیتے ہیں۔

آج ہم آپ کو ایک ایسی ہی سچی کہانی کے بارے میں بتارہےہیں جس میں ایک شخص نے جزیرے پر گم ہونے کی صورت میں 5 دن تک لیموں،کوئلے اور سمندر کا پانی پی کر خود کو نہ صرف زندہ رکھا بلکہ ریسکیو اہلکاروں کی مدد سے واپس گھر بھی پہنچ گیا۔

رپورٹس کے مطابق برازیل سے تعلق رکھنے والے نیلسن نیڈی کو ہفتے کے روز حکام نے جزیرے سے اس وقت بچایا جب ایک ہیلی کاپٹر نے انہیں  اپنی ٹی شرٹ لہراتے ہوئے دیکھا۔ 

اطلاعات کے مطابق نیلسن گزشتہ پیر کو برازیل کے شہر ریو ڈی جنیرو کے قریب گروماری ساحل پر گئے، وہ ایک چٹان کے اوپر کھڑے ہوکر  لہروں کو دیکھ رہے تھے کہ اچانک ایک زور دار لہر نے انہیں پانی میں گرا دیا اور وہ دو میل دور سمندر میں بہہ گئے۔

نیلسن کا کہنا ہے کہ جیسے میں پانی میں گرا تو میں نے تیرنا شروع کیا اور ساحل کے کنارے پر جانے کی کوشش کی لیکن پانی کا بہاؤ اتنا تیز تھا کہ وہ مجھے ایک  غیر آباد جزیرے تک لے گیا۔

نیلسن کے مطابق اس جزیرے پر کچھ نہیں تھا البتہ مجھے ایک غار نظر آیا جہاں میں تھوڑی دیر رُکا لیکن پھر میں نے کھانے کی تلاش شروع کردی۔تب ہی مجھے  ایک عارضی خیمہ، دو لیموں اور ماہی گیروں کے چھوڑے ہوئے پانی کی دو بوتلیں مل گئیں۔

نیلسن نے 5 روز تک خود کو زندہ رکھا اور اس دوران انہیں جلے ہوئے کوئلوں کی راکھ بھی کھانا پڑی اور سمندر کا نمکین پانی بھی پینا پڑا۔ 

رپورٹس کے مطابق 5 دن تک اس جزیرے پر اکیلے رہنے کے بعد انہیں ایک ہیلی کاپٹر فضا میں نظر آیا ، تو انہوں نے اپنی ٹی شرٹ ہوا میں لہرائی۔

خوش قسمتی سے ہیلی کاپٹر میں موجود افراد نے نیلسن کو دیکھا اور انہیں ریسکیو کیا گیا۔

رپورٹس کے مطابق نیلسن زخمی بھی تھے اس لیے انہیں فوراً اسپتال منتقل کیا گیا جہاں طبی امداد ملنے کے بعد انہیں ڈسچارج کردیا گیا۔