وہ حیرت انگیز مچھلی جو پانی سے باہر زمین پر 2 گھنٹے تک زندہ رہ سکتی ہے

ایک تحقیق میں اس بارے میں بتایا گیا / اے پی فوٹو
ایک تحقیق میں اس بارے میں بتایا گیا / اے پی فوٹو

سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ شارک کی نسل کی ایک چھوٹی مچھلی زمین پر چلنے کی انتہائی غیرمعمولی صلاحیت رکھتی ہے۔

امریکا کی فلوریڈا اٹلانٹک یونیورسٹی کے ماہرین کی تحقیق کے مطابق epaulette شارک خشک زمین پر 30 میٹر تک چل سکتی ہے اور اس مقصد کے لیے اپنے چپو جیسے فن ( مچھلیوں کے پر ) استعمال کرتی ہے۔

مگر زیادہ خاص بات یہ ہے کہ زمین پر چلنے کے دوران آکسیجن کی کمی کے چیلنج کا مقابلہ 2 گھنٹے تک کرسکتی ہے۔

شارک کی یہ قسم آسٹریلیا اور نیو گنی میں پائی جاتی ہے اور ماہرین کا کہنا ہے کہ اپنی حیران کن صلاحیتوں کے باعث یہ مچھلی موسمیاتی تبدیلیوں کا سامنا بھی کرسکتی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ اس طرح کی صلاحیتیں نہ صرف بقا کے لیے اہم ہیں بلکہ اس سے مشکل حالات میں مچھلی کی کارکردگی بھی مستحکم رہتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ شارک کی اس قسم نے موجودہ عہد کی کچھ موسمیاتی مشکلات کو سامنا کرتے ہوئے رہنا سیکھ لیا ہے۔

سائنسدانوں نے کہا کہ شارک کی مختلف اقسام سست روی اور تیزی سے چلنے کی صلاحیت رکھتی ہیں جس کی مدد سے وہ زمین پر چل کر زندگی کے لیے زیادہ مناسب ماحول تک پہنچ جاتی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ چھوٹی مچھلیاں ایک سے دوسری جگہ منتقل ہوجاتی ہیں جہاں انہیں نہ صرف خوراک تک رسائی حاصل ہوتی ہے بلکہ پانی میں آکسیجن کی شرح بھی بہتر ہوتی ہے۔

اس سے قبل 2020 کی ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا تھا کہ شارک کی کم از کم 9 اقسام اتھلے پانی میں چل سکتی ہیں۔

مگر epaulette شارک ان سب سے منفرد ہے کیونکہ یہ خشک زمین پر زیادہ وقت تک رہ کر آکسیجن کی کمی کا مقابلہ کرسکتی ہے اور 30 میٹر تک سفر بھی کرسکتی ہے۔

ماہرین کے مطابق ایک سے دوسری جگہ چل کر پہنچنے کی صلاحیت واقعی بہت اہم ہے۔

اس تحقیق کے نتائج integrative and comparative biology journal میں شائع ہوئے۔