بیس روپے زیادہ کیوں لیے؟ بھارتی شخص نے 22 سال بعد مقدمہ جیت لیا

تونگناتھ چترویدی نے 22 سال بعد ریلوے حکام سے مقدمہ جیت لیا ہے جس میں ان سے دو ٹکٹوں کی مد میں اضافی 20 روپے لیے گئے تھے۔ فوٹو: بی بی سی

تونگناتھ چترویدی نامی بھارتی شخص نے مسلسل 22 سالہ قانونی جنگ کے بعد ریلوے ٹکٹ کی مد میں زائد رقم کا مقدمہ جیت لیا لیکن ٹھہریے کہ یہ رقم کچھ زیادہ نہیں تھی بلکہ صرف 21 روپے زائد وصول کرنے پر وہ عدالت گئے تھے۔

سال 1999ء میں وہ ٹرین میں سفر کررہے تھے کہ ریلوے حکام نے ان سے دو ٹکٹوں پر اضافی 20 روپے اس وقت لیے جب وہ اترپردیش کے ماتھورا کینٹ ریلوے اسٹیشن سے سفر کررہے تھے۔

پیشے کے لحاظ سے وکیل تونگناتھ نے صارفین کی عدالت میں درخواست جمع کراتے ہوئے کہا کہ ریلوے انتظامیہ نے ان سے ٹکٹ پر 20روپے زائد لیے جو کسی بھی طرح جائز نہیں۔ اس مقدمے کی 120 سماعتیں ہوئیں جس کے بعد عدالت نے ان کے حق میں فیصلہ سنادیا۔ عدالت نے ریلوے حکام سے کہا ہے کہ وہ درخواست گزار کو رقم مع سود واپس کرے۔

66 سالہ تونگناتھ چترویدی نے کہا کہ انہوں نے مقدمے کی 100 سے زائد پیشیاں بھگتیں جس پر توانائی اور وقت کے زیاں کا مداوا نہیں کیا جاسکتا۔ انہوں نے بتایا کہ وہ ماتھورا سے مراد آباد جارہے تھے کہ ٹکٹ کلرک نے ان سے 20 روپے اضافی وصول کیے۔ ایک ٹکٹ 35 روپے کا تھا جس پر انہوں نے 100 روپے کا نوٹ دیئے لیکن کلرک نے 70 روپے کے بجائے 90 روپے کاٹے اور انہیں 10 روپے واپس کیے۔

انہوں ںے بتایا کہ کلرک سے احتجاج کرنے کے باوجود اس نے 20 روپے واپس نہیں کیے۔ اس کے بعد انہوں نے ریلوے انتظامیہ پر مقدمہ دائر کردیا۔

اس دوران ریلوے نے مقدمہ خارج کروانے کی بہت کوشش کی لیکن وہ اپنے مؤقف پر ڈٹے رہے اور اب 22 سال بعد مقدمہ جیت چکے ہیں۔