ایک عام عادت جو قبل از وقت جھریوں کا باعث بن جائے

یہ دعویٰ ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آیا / فوٹو بشکریہ اوہائیو اسٹیٹ یونیورسٹی
یہ دعویٰ ایک نئی طبی تحقیق میں سامنے آیا / فوٹو بشکریہ اوہائیو اسٹیٹ یونیورسٹی

اگر آپ چاہتے ہیں کہ چہرے پر قبل از وقت جھریاں نمودار نہ ہوں تو اسمارٹ فونز کا استعمال کم از کم کریں۔

یہ بات امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔

یہ کہنے کی ضرورت نہیں کہ موجودہ عہد میں اسمارٹ فونز کا استعمال بہت زیادہ کیا جارہا ہے بلکہ ایک عام عادت بن چکا ہے۔

اوریگن اسٹیٹ یونیورسٹی کی تحقیق میں بتایا گیا کہ اسمارٹ فونز، کمپیوٹرز اور دیگر ڈیوائسز کی اسکرینوں سے خارج ہونے والی نیلی روشنی جھریوں کا باعث بن سکتی ہے۔

تحقیق کے مطابق یہ نیلی روشنی ہمارے جسم کے متعدد خلیات پر اثرات مرتب کرتی ہے۔

محققین نے بتایا کہ نتائج سے عندیہ ملتا ہے کہ بہت زیادہ وقت نیلی روشنی کی زد میں رہنا قبل از وقت بڑھاپے کا باعث بن سکتا ہے۔

یہ تو پہلے سے معلوم ہے کہ سورج کی روشنی میں موجود الٹرا وائلٹ شعاعیں جلد کو نقصان پہنچاتی ہیں مگر ڈیوائسز سے خارج ہونے والی نیلی روشنی بھی جلد کے لیے نقصان دہ ہے۔

محققین نے بتایا کہ بڑھاپے کی متعدد وجوہات ہیں مگر خلیاتی سطح پر بڑھاپا اس وقت طاری ہوتا ہے جب خلیات اپنی مرمت کرنا اور نئے خلیات بنانا چھوڑ دیتے ہیں، اس صورت میں پورے جسم پر اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہی وجہ ہے کہ بزرگ افراد کو بیماری سے نجات پانے میں زیادہ عرصہ لگتا ہے جبکہ ہڈیاں اور اعضا تنزلی کا شکار ہونے لگتے ہیں۔

محققین کے مطابق نتائج سے ثابت ہوتا ہے کہ جسم میں خلیات کے افعال کا عندیہ دینے والے مخصوص مادوںmetabolites میں نیلی روشنی کے نتیجے میں تبدیلیاں آتی ہیں۔

یہ مادے میٹابولزم میں مدد فراہم کرتے ہیں اور فروٹ فلائیز پر نیلی روشنی کے تجربات میں سائنسدانوں نے یہ بات دریافت کی۔

ان کا کہنا تھا کہ ان نتائج کا اطلاق انسانوں پر بھی ہوتا ہے کیونکہ ہمارے جسم پر بھی ان کیڑوں جیسے ہی اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

محققین کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے انسانی خلیات پر مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔