انسانی تاریخ کا طویل ترین سال

جی ہاں ایک سال ایسا ہے جس کا دورانیہ دیگر کے مقابلے میں زیادہ تھا / فائل فوٹو
جی ہاں ایک سال ایسا ہے جس کا دورانیہ دیگر کے مقابلے میں زیادہ تھا / فائل فوٹو

کیا آپ کو معلوم ہے کہ انسانی تاریخ (جس کا ریکارڈ مرتب ہوا) میں وقت کے لحاظ سے طویل ترین سال کونسا ہے؟

اگر نہیں تو جان لیں کہ وہ سال 1972 ہے۔

یہ تاریخ کا طویل ترین سال ہے کیونکہ اس کا دورانیہ کسی بھی سال کے مقابلے میں پورے 2 سیکنڈ زیادہ تھا۔

جی ہاں واقعی پورے 2 سیکنڈ زیادہ ہونے کی وجہ سے یہ معلوم تاریخ کا طویل ترین سال قرار پایا۔

تو ایسا کیسے ممکن ہوا؟

ویسے 1972 ایک لیپ ائیر تھا اور فروری کا مہینہ 29 دن کا تھا، یعنی بیشتر برسوں کے مقابلے میں اضافی 24 گھنٹے پہلے ہی اس سال کا حصہ بن گئے تھے۔

مگر اس کے ساتھ ساتھ 2 لیپ سیکنڈ بھی اس سال کا حصہ بنے تھے۔

پہلے 30 جون اور پھر 31 دسمبر کو لیپ سیکنڈ کا اضافہ گھڑیوں میں کیا گیا جس کے نتیجے میں سال کا دورانیہ 2 سیکنڈ بڑھ گیا۔

ہر چند سال بعد سورج اور چاند کی کشش کی وجہ سے زمین کی گردش میں ایک سیکنڈ کا فرق آجاتا ہے جسے ماہرین کی جانب سے مخصوص اوقات میں گھڑی میں ایک اضافی سیکنڈ سے پورا کیا جاتا ہے۔

لیپ سیکنڈ کا نظام سب سے پہلے 1972 میں ہی متعارف کرایا گیا تھا اور اس کے نتیجے میں یہ ایک منفرد سال بن گیا۔

اب تک مجموعی طور پر 27 لیپ سیکنڈز کا اضافہ ہوچکا ہے اور آخری بار گھڑیوں میں لیپ سیکنڈ کا اضافہ 31 دسمبر 2016 کو کیا گیا۔